Adamzad ka Gham

پیڑ کو دیمک لگ جائے یا آدم زاد کو غم

دونوں ہی کو امجد ہم نے بچتے دیکھا کم

تاریکی کے ہاتھ پہ بیعت کرنے والوں کا

سُورج کی بس ایک کِرن سے گُھٹ جاتا ہے دَم

رنگوں کو کلیوں میں جینا کون سِکھاتا ہے!

شبنم کیسے رُکنا سیکھی! تِتلی کیسے رَم!

آنکھوں میں یہ پَلنے والے خواب نہ بجھنے پائیں’

دل کے چاند چراغ کی دیکھو، لَو نہ ہو مدّہم

ہنس پڑتا ہے بہت زیادہ غم میں بھی اِنساں

بہت خوشی سے بھی تو آنکھیں ہوجاتی ہیں نم

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s